غضب سلیکشن

تمام کھلاڑی ٹھٹھک کر اپنے کپتان کو دیکھنے لگے  .ایک لمحے کے لئے تماشائیوں سمیت ہر کسی کو سانپ سونگھ گیا .اس سکوت کو کپتان برائن کلوز نے توڑا اور کہا “کم آن مجھے گیند ہی لگی ہے کچھ نہیں ہوا .” تمام کھلاڑی جو کسی نا گہانی کے منتظر تھے انکی سانس میں سانس آئی .  ابھی پچھلی ہی گیند پر شارٹ لیگ پر کھڑے برائن کلوز کے گنجے سر پر ایک زوردار سٹروک کے سبب گیند لگی تو سب یہی سمجھے کہ شاید کپتان بیہوش ہو جائے گا یا درد سے لوٹ پوٹ ہو جائے گا مگر کلوز نے اسی طرح پر سکون انداز میں کھڑے کھڑے ہی دوبارہ فیلڈرز اور بولرز کو ہدایات دینا شروع کر دیں جیسے کچھ ہوا ہی نہ ہو . کچھ ہی روز قبل وفات پا جانے والے ، سابق انگلش کرکٹر اور کپتان کلوز اپنی اسی دلیری ،ہمت اور درد نہ محسوس کرنے کی صلاحیت کی وجہ سے کرکٹ کی تاریخ میں امر رہیں گے .کلوز نے ہی سب سے پہلے جیفری بائیکاٹ کو اوپننگ کرنے پر مجبور کیا .” مجبور” کا لفظ اس لئے استمعال کیا کہ کلوز نے بطور کپتان بائیکاٹ کو حکم دیا کہ تم ہی اوپننگ کرو گے .بائیکاٹ نے انکار کیا تو کلوز نے انہیں ٹیم سے باہر نکلنے کی دھمکی دی تب ،بائیکاٹ راضی ہوے .بعد میں وہ کرکٹ کی تاریخ کے چند مستند ترین اوپنرز میں شمار ہوے .ویو رچرڈز اور این بوتھم کو کلوز ہی سمرسٹ کی کاونٹی میں لے کر آئے .انہوں نے ہی ان دونوں کو پروموٹ کیا جب وہ اپنی اپنی قومی ٹیموں میں شامل بھی نہ ہوے تھے .دونوں آج تک کلوز کے احسان مند ہیں .اپنے پہلے کپتان کی وفات پر فورا انہوں نے کلوز کی فیملی سے رابطہ کیا .کیا ہمارے کھلاڑی بھی اپنے محسنوں کو ایسے ہی یاد رکھتے ہیں ؟
ایسے دلیر کھلاڑی کرکٹ کا سرمایا ہیں .گو کہ کلوز نے انگلینڈ کی جانب سے صرف بائیس ٹیسٹ ہی کھیلے لیکن اس دوران وہ سات بار انگلینڈ کے کپتان بھی رہے .پینتالیس سال کی عمر میں انہوں نے کالی آندھی کے طوفانی بولرز کے سامنے دلیری سے بیٹنگ کی .جسم پر گیندیں کھائیں اور اپنے زخموں کو ملا بھی نہیں . کلوز کے خیال میں سلیکٹر کا کام ایک مالی کی طرح ہے اس نے کھلاڑیوں کو پودے سے تناور درخت بنانا ہوتا ہے .. ادھر ہمارے سلیکٹر تو خود بخود تناور درخت بنتے کھلاڑیوں کی بھی جڑیں کاٹ رہے ہوتے ہیں .نوجوانوں کے لئے کلوز جیسے کھلاڑی اور کردار حوصلے کا سبب بنتے ہیں .ادھر ہماری ٹیم کی سلیکشن دیکھیں یہ کھلاڑیوں کے حوصلے توڑنے کا سبب بنتی ہے پشاور کے رفعت الله مہمند محدود اورز کی کرکٹ میں پرفارم کر کر کے تھک گیا ہے لیکن کسی کے کان پر جوں تک نہیں رینگ رہی .اب اگر اسکی عمر انتالیس برس ہو گئی ہے تو کیا اسکی پرفارمنس کو نظر انداز کر دیا جائے؟ایک طرف تو سلیکشن کمیٹی نے نیا ڈرامہ ڈالا ہوا ہے کہ ہر دورے میں ،دو تین نیے کھلاڑی ڈال دئے جاتے ہیں تاکہ میڈیا کا منہ بند ہو جائے اور سب کے سامنے ہیرو بنا جائے کہ ہم نے نوجوان کھلاڑیوں کو چانس دئے ہیں اور ہم کھلاڑیوں کے بیک اپ تیار کر رہے ہیں .حالانکہ یہ سب کچھ ایک غلیظ اور بھونڈے مذاق کے علاوہ کچھ نہیں ہے .نعمان انور کو ٹی وی پر ٹی ٹوینٹی ٹورنامنٹ پر ایک دو اننگز میں سکور کرتے دیکھا تو ٹیم میں ڈال لیا پھر ایک میچ کھلا کر دودھ میں سے مکھی کی طرح باہر پھینک دیا .کیا اس طرح کھلاڑیوں کا اعتماد برباد نہیں ہوتا ؟؟کیا اس طرح کھلاڑی مزید خود غرض نہیں ہو جاتے ؟؟جی ہاں ایسا ہی ہوتا ہے .مختار کو ایک سینچری پر ٹی ٹونٹی ٹیم میں ڈالا پھر ایک روزہ میں ڈالا اور اب وہ ایک روزہ ٹیم سے بھی باہر ہیں .بلال آصف کو بھی ٹی وی پر دیکھ کر ٹیم میں ڈالا لیکن اب انھیں بھی بغیر کھلائے ون ڈے ٹیم سے ڈراپ کر دیا گیا ہے آخر کیوں؟
بغیر کھلائے کسی بھی کھلاڑی کو آخر کس وجہ سے ڈراپ کیا جائے یہ سمجھ سے باہر ہے .زمبابوے میں تو آسان تھا کہ زیادہ سے زیادہ نیے کھلاڑیوں کو چانس دیا جاتا مگر سلیکشن کمیٹی لگتا ہے صرف خانہ پری پر یقین رکھتی ہے .بس کھلاڑی جاتے ہیں اور اپنے ٹیم کے کھلاڑیوں کو پانی پلا پلا کر واپس آ جاتے ہیں اگر کسی کو ایک میچ میں موقع مل گیا اور خوش قسمتی سے اس نے پرفارم کر دیا تو ٹھیک ورنہ پھر ٹیم سے باہر ..کیا یہ سلیکشن کا اصول ہوتا ہے ؟آپ ایک کھلاڑی کو اسکے ٹیلینٹ ،پرفارمنس اور رویے پر سلیکٹ کرتے ہیں .صرف ایک دو میچز سے کسی بھی کھلاڑی کی جانچ نہیں ہو سکتی .سمیع اسلم نے ایک ون ڈے میں پینتالیس رنز کئے اور پھر بھی انہیں ڈراپ کر دیا گیا .سمیع اسلم ون ڈے کے زیادہ کامیاب بلے باز تھے مگر انکو دو ٹیسٹ کھلا دے جس میں توقع کے مطابق وہ ناکام ہو گئے تو اب پھر ڈراپ ہیں .کیا صرف ٹی وی پر دکھائے جانے والے ٹی ٹونٹی ٹورنامنٹ کو دیکھ کر ایک آدھ پرفارمنس کی بنیاد پر ہی سلیکشن ہو گی ؟؟یہ ایک بھونڈا اور کمزور طریقہ ہے .کوئی بھی سلیکشن کمیٹی سب کو خوش نہیں کر سکتی اور اگر ایسی کوشش کرے گی تو کھلاڑیوں کو برباد کرے گی .لگتا ہے ہماری سلیکشن کمیٹی سب کو خوش کرنے کے چکروں میں ہے .یعنی کہ بڑی بڑی کراچی ،لاہور،سیالکوٹ ،پشاور وغیرہ کی اسوسی ایشنز بھی خوش رہیں،میڈیا کو بھی خوش رکھا جائے اور سینئر کھلاڑیوں پر بھی کسی بیک اپ پلئیرز کا پریشر نہ ہو .یہ ایک بھیانک حد تک غلط حکمت عملی ہے .
چار سب سے بد بو دار مذاق جو اس سلیکشن کمیٹی نے کئے ہیں ان میں سے پہلے دو مذاق ، وہ دورہ زمبابوے سے کراچی کے انور علی کو ریسٹ کے نام پر ڈراپ کرنا اور دوسرا پشاور کے ان فارم بیٹسمین افتخار احمد کو سلیکٹ نہ کرنا ہے .افتخار احمد نے جس سمجھداری سے ہدف کے تعاقب میں بیٹنگ کی ہے اس میں مصباح الحق کی جھلک دکھائی دیتی ہے .مصباح کی طرح افتخار بہت پر سکوں انداز میں کھیلتے ہیں .میچ کی صورت حال کو اپنے اوپر حاوی نہیں ہونے دیتے .فرق صرف یہ ہے کہ مصباح اکثر بڑے میچز میں کامیابی سے میچ فنش کرنے میں ناکام رہے مگر افتخار نے خوبی سے فائنل میچ میں شاندار فنش کیا .پچھلی بار بھی انہوں نے فائنل میں عمدہ اننگز کھیلی تھی .جو کھلاڑی بڑے اور اہم میچز میں میچ وننگ پرفارمنس دیتا ہے اسکو لازمی دوسرے کھلاڑیوں پر ترجیح دینی چاہئے .میرے خیال میں افتخار کو لازمی پاکستان کی ٹی ٹونٹی اور ون ڈے ٹیم میں ہونا چاہے .انور علی کو انجری کے نام پر ریسٹ دینا سمجھ سے بالا تر ہے .حیرت انگیز طور پر یہی انجرڈ انور علی پوری توانائی کے ساتھ فائنل میچ کھیل رہے تھے .سوال یہ ہے کہ انور علی کون سا پچاس سال سے کھیل رہے ہیں کہ انھیں ریسٹ دیا جائے ؟؟انکا کیریئر تو اب ٹھیک طریقے سے سٹارٹ ہوا ہے .انور علی کے معاملے میں دال میں کچھ کالا لگ رہا ہے . پھر وہ ایک روزہ ٹیم میں کیوں موجود ہیں ؟اگر ریسٹ ہی دینا تہ عرفان کو ریسٹ کیوں نہیں دیا گیا ؟بلکہ عرفان کو لازماً ریسٹ دینا بنتا تھا .زمبابوے کے بجائے انہیں انگلینڈ کے خلاف سیریز اور ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ کے لئے محفوظ رکھنا چاہئے .ریسٹ اگر دینا تھا تو حفیظ کو دینا چاہئے تھا تاکہ وہ اپنے بولنگ ایکشن پر بھی کام کرتے .ریسٹ دینا تھا تو احمد شہزاد کو دیا جاتا تو مسلسل پچھلے دو سال سے ہر فارمیٹ میں کھیلتے چلے آ رہے ہیں .
تیسرا سب سے بھیانک مذاق ہائر موبائل کپ کے ٹاپ رنز سکورر بہاولپور کے فیصل مبشر کو کسی بھی ٹیم نہ ڈالنا ہے .فیصل نے اس ٹورنامنٹ میں تقریباً تن تنہا اپنی ٹیم کو مین راؤنڈ تک پہنچایا.نوے کی اوسط اور تقریباً ایک سو تیس کے لگ بھگ کے سٹرائیک ریٹ سے رنز سکور کئے .بولنگ میں بھی پانچ وکٹ لئے .حفیظ کو اس سیریز میں ریسٹ دے کر ابا آسانی فیصل مبشر کو ٹیم میں ڈالا جا سکتا تھا .چوتھا بھیانک مذاق ٹورنامنٹ کے لیڈنگ وکٹ ٹیکر یعنی عمران خان جونیئر جو کہ ٹی ٹوینٹی ٹیم میں سلیکٹ ہوے ہیں انکے برابر وکٹ لینے والے رومان رئیس کو شامل نہ کرنا ہے .جب عمران خان جونیئر کو سلیکٹ کر لیا گیا تو با آسانی سہیل تنویر کی جگہ رومان رئیس کو بھی آزمایا جا سکتا تھا .یہ بات یاد رکھیں کہ دونوں عمران خان جونئیر اور رومان رئیس کوئی غیر معمولی رفتار کے بولرز نہیں ہیں .لیکن ان دونوں نے آخری اورز میں عمدہ بولنگ سے اپنی افادیت منوائی ہے . ٹی ٹونٹی ٹیم میں حفیظ ،صہیب مقصود ،سہیل تنویر ،عمر اکمل کو آرام دے کر فیصل مبشر،افتخار احمد،رفعت الله،اور رومان رئیس کو موقع دینا چاہئے تھا .ون ڈے ٹیم میں اسد شفیق،عرفان کو ریسٹ دے کر اسلام آباد کے اچھی رفتار کے بولر شہزاد اعظم رانا اور افتخار احمد کو چانس دینا چاہئے تھا .یہاں پر ملتان کے آل راؤنڈر عامر یامین کی سلیکشن پر سلیکشن کمیٹی کو اس اچھے فیصلے پر داد ملنی چاہئے .عامر یامین کو اب موقع بھی ملنا چاہئے .ان میں اچھا پوٹینشل ہے .لیکن دیکھنا ہو گا کہ وہ کس طرح سے امپروو کرتے ہیں .انگلینڈ کے لئے ٹیسٹ ٹیم کی سیلکشن تو کوئی گلی کا بچہ بھی کر لے کیونکہ ٹیسٹ ٹیم اتنی سیٹلڈ ہے ہر کھلاڑی کی پوزیشن طے ہے .فواد عالم کو ٹیسٹ میں موقع ملنا بھی خوش آئند ہے کہ وہ بنیادی طور پر ٹیسٹ ہی کے کھلاڑی ہیں .ٹیسٹ ٹیم میں ایک مزید سپنر کی گنجائش ضرور ہے .بلال آصف میں اتنا پوٹینشل ہے کہ انھیں ٹیسٹ ٹیم میں ڈالا جا سکتا ہے .یاد رہے کہ انگلش ٹیم میں کک،سٹوکس اور معین علی کی شکل میں تین لیفٹ ہینڈڈ بلے باز تو لازمی کھیلیں گے .براڈ اور اینڈرسن بھی کھبے ہی کھیلتے ہیں .یوں ایک آف سپنر کی ضرورت حفیظ کی بطور بولر غیر موجودگی کی صورت میں کافی بڑھ جاتی ہے .ہماری سیلکشن کمیٹی نے پریکٹس میچ کے لئے دونوں لیفٹ ارم سپنرز اصغر ارو ظفر گوہر کو چنا ہے .کہا یہ جا رہا ہے کہ ان دونوں ہی میں سے تیسرے سپنر کو منتخب کیا جائے گا .ہمارے خیال میں تیسرا سپنر آف سپنر ہونا چاہئے .سعید اجمل کی غیر موجودگی میں بلال آصف کے علاوہ کوئی مناسب لیگل ایکشن کا بولر نظر نہیں آ رہا ہے

.

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s