دنیا کے لیجنڈ رائیٹرز لکھتے وقت کیا انداز اپناتے تھے ؟ عماد بزدار کا دلچسپ انتخاب

اردو کے مشہور افسانہ نگار اور ناول نگار کرشن چندر تنہائی میں کمرا بند کر کے لکھتے تھے۔ اہک بار ان کی بیگم نے چپکے سے کمرے میں جھانک کر دیکھا۔ وہ بتاتی ہیں کہ کرشن اردگرد سے بے خبر اپنے لکھنے کے پیڈ پر جھکے ہوئے تھے۔ اس لمحے ان کا چہرہ بہت ظالم، بھیانک اور اجنبی سا لگا۔ تیوریاں چڑھی ہوئی تھیں۔ ہونٹ بھنچے ہوئے تھے اور ان کے ہاتھ میں قلم خنجر کے مانند نظر آ رہا تھا۔ کچھ دیر کے بعد کرشن کمرے سے نکلے اور سیدھے کھانے کی میز کی طرف آئے۔ اس وقت ان کا چہرہ پرسکون، گمبیھر اور معصوم نظر آیا۔
فرانسیسی ناول نگار وکٹر ہیو گو کی یہ عادت تھی کہ وہ لکھتے وقت سیدھا کھڑا ہو جاتا اور لکھنے کے لیے کندھے جتنی اونچی میز استعمال کرتا۔ ونسٹن چرچل بھی ابتدا میں لکھتے وقت اسی قسم کا انداز اپناتا تھا۔
فرانسیسی ناول نویس ڈیوما لکھتے وقت لیموں کے علاوہ کسی اور پھل کا مشروب نہیں پیتا تھا۔
آئرلینڈ کے مشہور ناول نگار جیمز جوائس نے اپنی تمام تحریریں بستر پر الٹے لیٹ کر لکھیں۔ اس کا کہنا تھا “میں اس طریقے سے لکھتے ہوئے آرام و سکون محسوس کرتا ہوں۔”

لاتعداد ادیب لکھتے ہوئے بے شمار سیگریٹ پیتے ہیں۔ اسی طرح بعض ادیب لکھتے ہوئے چائے پینے کے عادی ہوتے ہیں۔
فرانسیسی ادیب بالزاک چائے کے بجائے کوفی پیتا تھا۔ایک دفع اس نے کہا تھا “میں کوفی کی دس ہزار پیالیاں پی کر مروں گا۔”
بعض ادیب ایسے بھی گزرے ہیں جو لکھنے کے دوران اپنی میز پر اپنے قریب سیب یا شہد رکھتے۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ سیب یا شہد کی خوشبو سونگھنے سے ان کے خیالات کو تحریک ملتی۔
ایک زمانہ تھا جب ادیب اتنے نازک مزاج ہوتے تھے کہ بلی کی میاوں میاوں اور مرغ کی ککڑوںکوں سے بے چین ہو جاتے اور ایک دم ان کے قلم رک جاتے۔ تاہم آج کے بیشتر ادیب لکھتے وقت اردگرد ہلکا پھلکا شور پسند کرتے ہیں۔
اردو کے منفرد اور مشہور افسانہ نگا سعادت حسین منٹو لکھتے وقت صوفے پر بیٹھ کر دونوں گھٹنے سکیڑ لیتے اور ایک چھوٹی سی پنسل سے کہانی لکھتے۔ افسانہ شروع کرنے سے پہلے وہ ۷۸۶ ضرور لکھتے تھے جو غلط طور پر بسم اللہ ارحمٰن الرحیم کے ہم معنی سمجھا جاتا ہے۔
اردو ہی کی مشہور افسانہ نگار اور ڈرامہ نگار عصمت چغتائی اوندھی لیٹ کر لکھتی تھیں اور لکھتے ہوئے عموماً برف کی ڈلیاں چباتی جاتیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈلیاں چبانے سےمیرے دماغ میں نت نئے خیالات آتے ہیں۔
اردو کے ممتاز مزاح نگار شفیق الرحمٰن ہمیشہ کھڑے ہو کر لکھتے تھے۔
انگریزی کا ادیب ٹموتھی ڈیکسٹر اپنی تحریر میں کامے، فل سٹاپ اور ڈیش وغیرہ نہیں لگاتا تھا۔ وہ اپنی تحریر میں اس قاعدے کا بھی خیال نہیں رکھتا تھا کہ ہر نیا جملہ بڑے حروف تہجی سے شروع ہو۔نتیجحتاٰ اس کی تحریر ایک طویل ترین جملہ لگتی۔ اس کی کتاب کے ناشر نے ایک دفع پریشان ہو کر اسے لکھا کہ اس میں نہ تو کاما ہے، نہ فل سٹاپ، میں کیا کروں۔ ڈیکسٹر نے کچھ کاغذوں پر بےشمار کامے، ڈیش، فل سٹاپ وغیرہ لکھے اور ناشر کو اس پیغام کے ساتھ روانہ کر دیے کہ جہاں جہاں ضرورت ہو وہ اس کاغذ سے کامے، ڈیش اور فل سٹاپ وغیرہ لے لے۔
آج تو کمپیوٹر کا دور ہے لیکن پہلے وقتوں میں تحریر صاف رکھنے کے لیے ٹائپ رئٹر استعمال کیا جاتا تھا۔ تاہم چارلس ڈکنز اس کا ستعمال نہیں جنتا تھا، اس لیے ڈکنز کی تحریریں پڑھنا نہایت دشوار کن مرحلہ ہوتا تھا۔ اس کی تحریریں خاردار تاروں کے مانند الجھی نظر آتیں۔
مشہور ادیب ڈیوما لکھتے ہوئے ایک اونچا اور لمبا ٹوپ پھول دار جاپانی چوغے کے ساتھ پہنتا۔ وہ کہتا تھا “میرے آدھے خیالات اس ٹوپ کے اندر ہوتے ہیں اور آدھے ان جرابوں میں جو میں روحانی مناظر لکھتے وقت پہنتا ہوں۔


عماد بزدار ابو ظہبی میں جاب کرتے ہیں .امریکن ہسپتال سے وابستہ ہیں .اکاؤنٹس تعلق ہے .سی اے کر چکے ہیں .فیس بک پر متحرک ہیں .
Ammad

.https://www.facebook.com/ammad.buzdar

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s